You are here
Home > پا کستا ن > خادم اعلیٰ صاحب ! آپ کا یہ شوق بھی پورا کر دیں گے۔۔۔۔ چیف جسٹس ثاقب نثار نے شہباز شریف کی گردن کا سریا نکال دینے والی بات کہہ دی

خادم اعلیٰ صاحب ! آپ کا یہ شوق بھی پورا کر دیں گے۔۔۔۔ چیف جسٹس ثاقب نثار نے شہباز شریف کی گردن کا سریا نکال دینے والی بات کہہ دی

لاہور(ویب ڈیسک)اسلام آباد چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے ریمارکس دیے کہ شہباز شریف کو عدالت آنے کا شوق ہے، بلایا تو آنا پڑجائے گا۔تفصیلات کے مطابق پنجاب میں ورک چارج ملازمین کی مستقلی سے متعلق کیس کی سماعت سپریم کورٹ میں ہوئی۔ دوران سماعت چیف جسٹس اور ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل پنجاب میں دلچسپ مکالمہ ہوا۔

ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل عاصمہ عاصمہ حامد نے کہا کہ ملازمین کی 2012ء میں ہونے والی بھرتیاں غیرقانونی ہیں، چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے پوچھا بھرتیاں کس کے حکم پر ہوئیں تھیں۔عاصمہ حامد نے کہا کہ بھرتیاں وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کے حکم پر ہوئیں تھیں۔ چیف جسٹس نے کہا کہ کیوں نہ شہباز شریف کو نوٹس جاری کریں، حکومت اپنے ہی وزیراعلیٰ کی بھرتیاں غیرقانونی قرار دے رہی ہے، سرکاری اداروں کا ورک چارج پر ملازمت دینا قانون کے ساتھ فراڈ ہے، بھرتیاں بظاہر بدنیتی پر مبنی تھیں،عاصمہ حامد نے چیف جسٹس سے کہا کہ ایسے الفاظ میرے کھاتے میں نہ ڈالیں۔ چیف جسٹس نے کہا کہ وزیراعلیٰ کو بلایا تو انہیں پیش ہونا پڑے گا، ویسے بھی شہباز شریف کو عدالت آنے کا بہت شوق ہے۔عدالت نے ملازمین کی مستقلی کیخلاف صوبائی حکومت کی اپیل خارج کردی۔ دوسری طرف وزیراعلیٰ پنجاب اور ن لیگ کے صدرشہبازشریف نے چوہدری نثار کوپارٹی کاقیمتی اثاثہ قراردے دیا اور تحفظات دورکرنے کی بھی یقین دہانی کرادی ہے۔تفصیلات کے مطابق وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف نے چوہدری نثار سے ملاقات کی، ملاقات کے دوران پارٹی امور پر تبادلہ خیال کیا گیا، چوہدری نثار نے وزیراعلیٰ پنجاب کو اپنے تحفظات سےآگاہ کیا، جن کا اظہار وہ پہلے ہی میڈیا پرکرچکے ہیں۔وزیراعلیٰ پنجاب اور ن لیگ کے

یہ بھی پڑھیں:ایسے ہوتے ہیں ہیرو : وہ وقت جب نواز شریف نے امریکیوں کو کہا جناب مجھے تو کوئی اعتراض نہیں مگر ہمارا ائیرچیف سہیل امان اس بات کی اجازت نہیں دے رہا ۔۔۔ واقعہ کی تفصیلات آپ کو سوچ میں ڈال دیں گی

صدر شہباز شریف نے چوہدری نثار کو پارٹی کا قیمتی اثاثہ قرار دیتے ہوئے تحفظات دورکرنےکی یقین دہانی کرائی۔شہباز شریف کا کہنا تھا کہ غلط فہمیوں کا ازالہ کیا جائے گا۔اس سے قبل چوہدری نثار نے کہا تھا کہ خدشہ ہے کہ نوازلیگ کا صدر بنانے کے بعد شہباز شریف کو کام کرنے کا مینڈیٹ نہیں دیا جائے گا اور اگر انہیں کام کرنے کا پورا مینڈیٹ دیا گیا تو پارٹی کے کئی امور میں مزید بہتری آسکتی ہے۔یاد رہے کہ نواز شریف اور چوہدری نثار کے درمیان اختلافات شدت اختیار کر چکے ہیں، گذشتہ دنوں سابق وزیر داخلہ نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے اعلان کیا تھا کہ وہ شہباز شریف کو پارٹی لیڈر مانتے ہیں، اگر مریم نواز پارٹی لیڈر بنیں، تو وہ ن لیگ سے الگ ہوجائیں گے۔خیال رہے چند ماہ قبل نااہل وزیراعظم نواز شریف کا کہنا تھا کہ چوہدری نثارنےمشکل وقت میں پیٹھ میں چھراگھونپا،ن لیگ چوہدری نثار نہیں میری وجہ سے قائم ہے، میں اٹل فیصلہ کرچکا ہوں جبکہ شہباز شریف نے کہا تھا چوہدری نثار کو ایک موقع دینا چاہیے۔(م،ش)


Top