You are here
Home > خبریں > جاٹ ، راجپوت یا اعوان ۔۔۔؟؟؟صوبہ پنجاب میں اس بار قومی و صوبائی اسمبلی کی سب سے زیادہ سیٹیں کونسی برادری لے گئی ؟ جواب آپ کی توقع کے برعکس نکلے گا

جاٹ ، راجپوت یا اعوان ۔۔۔؟؟؟صوبہ پنجاب میں اس بار قومی و صوبائی اسمبلی کی سب سے زیادہ سیٹیں کونسی برادری لے گئی ؟ جواب آپ کی توقع کے برعکس نکلے گا

لاہور(ویب ڈیسک)پنجاب میں قومی اسمبلی کی 141 نشستوں میں 31 پر راجپوت ،15 سید 14 ضاٹ 11 آرائیں 9 بلوچ ،8 پٹھان ،6 اعوان ، 5 کشمیری منتخب ۔عام انتحابات میں پنجاب میں قومی اسمبلی کی 141 نشستوں میں 31 پر راجپو ت5 سید 14 ضاٹ 11 آرائیں 9 بلوچ ،8 پٹھان ،
[wpna_ad placement_id=”875561829268605_875561839268604″]
6 اعوان ، 5 کشمیری امیدوارایم این ایز منتخب ہوئے ہیں جبکہ 38نشستوں پر بھروانہ ،عباسی ،ڈوگر،اویسی ،پیرزادہ ، ملک ،انصاری، کھراور دیگر برادری کے افراد کامیب ہو کر اسمبلی میں پہنچے ہیں ۔ نو منتخب راجپوت ایم این ایز میں رانا شمیم احمد خان ، رانا محمد اسحاق خان ،راجہ پرویز اشرف ،عامر محمود کیانی ۔ احسن اقبال ، محسن نواز ، رانا تنویر حسن رانا مبشر اقبا ل معین وٹو ،احمد رضا مانیکا و دیگر۔7 بلوچ قومی اسمبلی کے نئے اراکین میں نصراللہ دریشک ،جعفر خان لغاری ، ریا ض محمود مزاری ،امجد فاروق کھوسہ ،محمد خان لغاری ودیگر ۔پٹھان منتخب ایم این ایز میں عمران خان امجد خان نیازی ،ثناءاللہ مستی خیل ودیگر ۔اعوان برادری کے ملک محمد اسلم ،محبوب اسلم ، ملک ذوالفقار خان ،اعجاز احمد ودیگر۔کشمیری ارکان میں شہباز شریف ،حمزہ شہباز ،محمد آصف خرم دستگیر۔گوجر برادری میں چودھری عابد رضا ، مسز مہناز اکبر ،شہباز احمد چودھری،شفقت محمود ۔شیخ برادری میں شیخ رشید احمد ،سعد وسیم ،روحیل اصغر شامل ہیں۔دوسری جانب ایک اور خبر کے مطابق لاہورہائی کورٹ نے پاکستان تحریک انصاف کے امیدوار عثمان ڈار کی این اے 73 سیالکوٹ میں دوبارہ گنتی اور خواجہ آصف کی کامیابی کا نوٹیفکیشن روکنے کی درخواست مسترد کردی ۔
[wpna_ad placement_id=”875561829268605_875561839268604″]
تفصیلات کے مطابق لاہور ہائی کورٹ میں جسٹس مامون الرشید شیخ نے این اے 73 سیالکوٹ سے پی ٹی آئی کے ناکام امیدوار عثمان ڈار کی درخواست پر سماعت کی ۔درخواست گزار نے مؤقف اختیار کیا کہ اس نے سیالکوٹ این اے 73 سے انتخاب لڑا اور دوسرے نمبر پر رہا تاہم گنتی کے عمل میں متعدد بے ضابطگیاں سامنے آئیں اور پریزائیڈنگ افسران نے فارم 45 پولنگ ایجنٹس کو فراہم نہیں کیا ۔درخواست میں کہا گیا خواجہ آصف سے صرف 1406 ووٹوں سے شکست ہوئی جبکہ حلقے میں 7 ہزار 346 ووٹ مسترد ہوئے۔دائر درخواست میں استدعا کی گئی ریٹرننگ افسر، کو حلقے کی دوبارہ گنتی کی درخواست دی جسے مسترد کردیا گیا لہذا عدالت حلقے میں دوبارہ گنتی کروانے کا حکم دے اور گنتی تک خواجہ آصف کی کامیابی کا نوٹیفیکیشن روکنے کا حکم دے۔جس کے بعد لاہور ہائی کورٹ نے این اے 73 میں دوبارہ گنتی اور خواجہ آصف کی کامیابی کا نوٹیفکیشن روکنے کی درخواست مسترد کر دی۔واضح رہے کہ این اے 73 سے ن لیگ کے خواجہ آصف 116975 ووٹ لے کر 1406 کی لیڈ سے جیتے تھے۔ این اے 73 سے ن لیگ کے خواجہ آصف 116975 ووٹ لے کر 1406 کی لیڈ سے جیتے تھے۔ (ش۔ز۔م)
[wpna_ad placement_id=”875561829268605_875561839268604″]


Top