You are here
Home > خبریں > شریفوں اور انکے حواریوں کا انجام دیکھ کر بڑے ادارے کے اعلیٰ ترین افسر نے استعفیٰ دے دیا،حیران کن خبر آ گئی

شریفوں اور انکے حواریوں کا انجام دیکھ کر بڑے ادارے کے اعلیٰ ترین افسر نے استعفیٰ دے دیا،حیران کن خبر آ گئی

لاہور(ویب ڈیسک)پنجاب صاف پانی کمپنی (پی ایس پی سی) کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر (سی ای او) کیپٹن (ر) محمد عثمان نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا۔صاف پانی کمپنی کے سی ایف او عمر ملک کو سی ای او کا بھی اضافی چارج سونپ دیا گیا۔کیپٹن (ر) محمد عثمان 14 لاکھ
[wpna_ad placement_id=”333645507096937_333645520430269″]

65 ہزار روپے ماہانہ تنخواہ لیتے رہے، تاہم ادارے کی جانب سے صاف پانی فراہم نہیں کیا گیا۔خیال رہے کہ کیپٹن (ر) محمد عثمان کے خلاف نیب لاہور میں بھی تحقیقات جاری ہیں اور وہ نیب لاہور میں 2 مرتبہ پیش بھی ہوچکے ہیں۔کیپٹن (ر) محمد عثمان ڈی سی او لاہور بھی رہ چکے ہیں جبکہ وہ ڈائریکٹر فوڈ کے عہدے پر بھی تعینات رہے ہیں۔خیال رہے کہ پنجاب صاف پانی کمپنی میں کرپشن کے حوالے سے گزشتہ برس چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے ازخود نوٹس لیا تھا۔گزشتہ سال دسمبر میں چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے صوبہ پنجاب میں صاف پانی کی فراہمی کی عدم فراہمی پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے صوبائی حکومت سے رپورٹ طلب کی تھی۔رواں سال فروری میں سپریم کورٹ نے صاف پانی از خود نوٹس میں اس وقت کے وزیرِ اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کو طلب کیا تھا۔اپریل میں کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے انتباہ دیا تھا کہ یہ کیس نیب کو دیا جاسکتا ہے۔3 اگست کو ہونے والی سماعت میں پی ایس پی سی کے سابق سی ای او وسیم اجمل کی جانب سے الزامعائد کیا گیا تھا کہ پنجاب صاف پانی کمپنی اسکینڈل میں شہباز شریف نے
[wpna_ad placement_id=”333645507096937_333645520430269″]

اپنے داماد عمران علی یوسف کو بچانے کے لیے انہیں قربانی کا بکرا بنایا۔ان الزامات کے بعد امکان ظاہر کیا جارہا تھا کہ ’وسیم اجمل، شہباز شریف کے خلاف گواہ بھی بن جائیں‘۔دوسری جانب وزیراعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر اور پشتونخوا میپ کے سربراہ محمود اچکزئی کو اڈیالہ جیل میں نوازشریف سے ملاقات کرنے کی اجازت نہیں دی گئی۔اڈیالہ جیل میں آج قیدیوں سے ملاقات کا دن ہے اور میاں نوازشریف، مریم نواز، کیپٹن (ر) صفدر سے ملاقات کے لیے پارٹی رہنما اڈیالہ جیل پہنچے ہیں۔ پشتونخوا ملی عوامی پارٹی کے سربراہ محمود اچکزئی بھی نوازشریف سے ملاقات کے لیے اڈیالہ جیل پہنچے تاہم انہیں ملاقات کی اجازت نہیں دی گئی جب کہ وزیراعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر اور سینیٹر عثمان کاکڑ کو بھی ملنے کی اجازت نہیں ملی۔اڈیالہ جیل کے باہر میڈیا سے گفتگومیں محمود اچکزئی نے کہاکہ دو ہفتے سے اسلام آباد میں ہوں، ہر بار مجھے منع کردیتے ہیں، یہ کیا طریقہ ہے، وہ تین بار کے وزیراعظم ہیں۔محمود اچکزئی کا کہنا تھا کہ آئین ہر آدمی کوجیل میں کسی بھی آدمی سے ملاقات کا حق دیتا ہے۔دوسری جانب میاں نوازشریف سے ملاقات کے لیے شہبازشریف بھی بذریعہ موٹروے لاہور سے اسلام آباد روانہ ہوگئے ہیں، اس کے علاوہ مریم اورنگزیب، سعود مجید، برجیس طاہر اور سعد رفیق بھی سابق وزیراعظم سے ملاقات کے لیے اڈیالہ جیل پہنچے۔(ذ،ک)
[wpna_ad placement_id=”333645507096937_333645520430269″]


Top