You are here
Home > پا کستا ن > بریکنگ نیوز : چوٹ پر چوٹ : 27 فروری کو بھارتی فضائیہ پر ایک نہیں دو قیامتیں ٹوٹیں ۔۔ دو جنگی جہاز تو پاک فضائیہ نے مار گرائے مگر انکا مدد گار بن کر آنیوالا ہیلی کاپٹر کس ملک کے میزائل کا نشانہ بنا ؟ کئی ہفتے بعد دھماکہ خیز انکشاف

بریکنگ نیوز : چوٹ پر چوٹ : 27 فروری کو بھارتی فضائیہ پر ایک نہیں دو قیامتیں ٹوٹیں ۔۔ دو جنگی جہاز تو پاک فضائیہ نے مار گرائے مگر انکا مدد گار بن کر آنیوالا ہیلی کاپٹر کس ملک کے میزائل کا نشانہ بنا ؟ کئی ہفتے بعد دھماکہ خیز انکشاف

نئی دہلی(ویب ڈیسک ) بھارتی اخبار اکنامسٹ ٹائمز نے لکھا ہے کہ تفتیش کاروں کو معلوم ہوا ہے کہ 27 فروری کو سری نگر کے قریب بڈگام میں ایم آئی 17 وی 5 ہیلی کاپٹر کے تباہ ہونے سے قبل ممکنہ طور پر اسرائیل ساختہ بھارتی ایئر ڈیفنس میزائل فائر کیا گیا تھا،

جس کے نتیجے ہیلی کاپٹر میں موجود6 بھارتی ایئر فضائیہ کے اہلکار اور زمین پر موجود ایک شہری ہلاک ہوا۔بھارتی اخبار اکنامسٹ ٹائمز کے مطابق تفتیش کار پاکستانی طیاروں کے ساتھ ہونے والی فضائی جھڑپ کے دوران پیش آنے والے واقعات کا جائزہ لے رہے ہیں۔اسی بارے میں بھاتی دفاعی تجزیہ کار سمجھے جانے والے منو پبی نے ہیلی کاپٹر کے تباہ ہونے سے قبل آخری لمحات کے بارے میں رپورٹ کیا کہ آئی ایف ایف (آڈینٹیٹی، فرینڈ یا فوئی) سسٹم کے بند یا کھلے ہونے سے متعلق دیکھا جارہا ہے اور اس بات کا بھی احتیاط سے تعین کیا جارہا کہ اس وقت کیا غلطی ہوئی تھی۔اخبار نے انتہائی باخبر ذرائع کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا کہ ایئرفورس کے لوگوں کی جانب سے یہ واضح کردیا گیا کہ اگر تحقیقات میں اہلکار جرم کے مرتکب پائے گئے تو وہ ان اہلکاروں کے خلاف کورٹ مارشل کے آغاز سے نہیں گھبرائیں گے۔رپورٹ میں بتایا گیا کہ یہ بات سامنے آئی کہ اب تحقیقات کا مرکز اس بات کا تعین کرنا ہے کہ اگر فرینڈلی فائر سے اثاثوں کے تحفظ کے لیے بنائی گئی متعدد تہیں ناکام ہوئیں تو کس طرح مستقبل میں اس طرح کے واقعات سے بچنے کے لیے نظام کو بہتر کیا جائے۔اکنامسٹ ٹائمز نے اپنے ذرائع کو نقل کرتے ہوئے بتایا کہ ’27 فروری کی صبح سرحد پار پاکستانی ایئر فورس کے 25 سے زائد طیاروں کی نشاندہی‘ کے بعد بھارت کے زیر تسلط جموں اور کشمیر اور سرحد کے ساتھ دیگر حصوں میں فضائی دفاعی انتباہ جاری کیا گیا

اور اس کے بعد اسرائیلی ساختہ تصور کیے جانے والے میزائل کو چلایا گیا۔ذرائع کا کہنا تھا کہ اس انتباہ میں ’اشارہ دیا گیا کہ پاکستانی طیارے بھارتی فوجی اہداف پر حملہ کرنے کے لیے سرحد پار کرنے کی کوشش کرسکتے ہیں اور اس خدشے کا اظہار بھی کیا گیا کہ ان سے منسلک مسلح یو اے ویز ملک میں بھی گرائے جاسکتے ہیں‘۔بھارتی اخبار کے مطابق سست رفتار ہدف جیسے ایم آئی 17 وی 5 ہیلی کاپٹر ایئربیس پر نچلے سطح پر اڑنے والے مسلح یو اے ویز کا ممکنہ طور پر غلطی سے شکار ہوسکتا ہے۔ذرائع کے مطابق ’جب فضائی دفاع کا انتباہ جاری ہوتا ہے تو کچھ چیزیں کی جاتی ہیں، ٹرانسپورٹ ایئرکرافٹ اور ہیلی کاپٹرز کے لیے مخصوص کیے گئے قوانین پر عمل کرنا ضروری ہوتا ہے اور اڑنے والے ایئرکرافٹ کو حدبندی کیے گئے راستوں سے داخلہ اور انخلا کرنا ہوتا ہے جبکہ ایئرکرافٹ کو آئی ایف ایف نظام بھی کھلا رکھنا ہوتا ہے۔اکنامسٹ ٹائمز نے رپورٹ کیا کہ ’ ہیلی کاپٹر 10 منٹ کے دورانیہ میں اس وقت تباہ ہوا جب لائن آف کنٹرول پر بھاتی فضائیہ کے طیارے پاکستانی فضائیہ کے طیاروں کے ساتھ فضائی لڑائی میں شامل تھے اور اس وقت بھارت کا ایئر ڈیفنس سسٹم آپریشنل الرٹ پر تھا‘۔رپورٹ کے مطابق’ بھارتی حکام کی جانب سے باضابطہ طور پر حادثے کا ذکر تو کیا گیا لیکن فضائی لڑائی اور پاکستان کے ساتھ حالیہ کشیدگی پر اپنے سرکاری بیان میں اس کا ذکر نہیں کیا گیا‘اپنے سرکاری بیان میں بھارت نے نوشہرہ میں پاکستانی فوج کے ساتھ فضائی لڑائی کو تسلیم کیا لیکن یہ کہا کہ ہیلی کاپٹر کے واقعے میں ان کے لڑاکا طیارے شامل نہیں تھے


Top