کرونا کے بعد ایک اور بڑی آفت۔پچاس فیصد ملازمین کو گھر سے ہی کام کرنا ہوگا،عدالت کا بڑا حکم

" >

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک )لاہور ہائیکورٹ میں اسموگ پر قابو پانے سے متعلق بڑا فیصلہ کرتے ہوئے نجی اداروں کے 50 فیصد ورکرز کو گھروں میں بیٹھ کر کام کرنے کا حکم کر دیا۔ عدالت نے اسکول بند کرنے کی تجویز مسترد کر دی۔

لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس شاہد کریم نے شیراز ذکا ایڈووکیٹ سمیت دیگر کی درخواستوں پر سماعت کی تو جوڈیشل واٹر اینڈ انوائمنٹ کمیشن کے سربراہ جسٹس ریٹائرڈ علی اکبر قریشی کی رپورٹ پیش کی گئی. کمیشن نے ہائیکورٹ میں سموگ ایمرجنسی پلان پیش کیا اور سفارش کی گئی کہ سموگ کی وجہ سے بند ہونے والے سکولوں کی کلاسز آن لائن شروع کی جائیں۔کمیشن نے یہ بھی تجویز دی کہ500 ائیر کوالٹی انڈیکس والے علاقوں میں تمام صنعتی یونٹس بند کئے جائی، کمیشن نے یہ سفارش کی کہ دھواں کنٹرول کرنیوالے آلات نہ لگانے والی فیکٹریوں کو 50 ہزار سے 1 لاکھ تک کے جرمانے کئے جائیں۔

عدالت نے ریمارکس دیئے کہ سموگ کی وجہ سے حکومت نجی دفاتر میں پچاس فیصد سٹاف کے ساتھ کام کا نوٹیفکیشن جاری کرے، ہائیکورٹ نے پی ڈی ایم اے کے دفتر میں سموگ سیل قائم کرنے ،ٹریفک کی ایمرجنسی کال لائن قائم کرنے کا حکم بھی دیا

?>

اپنا تبصرہ بھیجیں