لاہور کی فضاء زہر آلود،شہری خطرناک بیماریوں کا شکار ہونے لگے

" >

لاہور(ویب ڈیسک) دنیا کے آلودہ ترین شہروں کی فہرست میں لاہور آج بھی سرفہرست ہے۔

ائیر کوالٹی انڈیکس مجموعی طور پر 424 پر پہنچ گیا، جس سے شہری آنکھوں اور سانس کی بیماریوں میں مبتلا ہوگئے
کوٹ لکھپت میں سب سے زیادہ 680 اے کیو آئی ریکارڈ کیا گیا۔ گلبرگ میں 462، ڈیوس روڈ میں 562 ایئر کوالٹی انڈیکس ریکارڈ کیا گیا۔ ڈی ایچ اے فیز 2 میں 447، ٹاون شپ میں 440، بحریہ آرچرڈ میں 413، علامہ اقبال ٹاون میں 424، پنجاب یونیورسٹی میں 424، ایڈن کاٹیجز میں 406، انارکلی بازار میں 481 اے کیو آئی ریکارڈ کیا گیا

دوسری طرف لاہور ہائیکورٹ میں اسموگ کی روک تھام کے اقدامات سے متعلق درخواست کی سماعت ہوئی جس سلسلے میں فوکل پرسن جوڈیشل واٹرکمیشن ہائیکورٹ اور چیف ٹریفک آفیسر لاہور عدالت میں پیش ہوئےسی ٹی او نے کہا کہ اسموگ ڈینگی اور کورونا سے بڑا معاملہ ہے جس پر جسٹس شاہد کریم کا کہنا تھا کہ اسموگ پر فوری اقدامات کے ساتھ لانگ ٹرم پلاننگ بھی کرنا ہوگی۔

عدالت نے پنجاب حکومت کے وکیل کو اسموگ کا معاملہ دیکھنے کے لیے کمیٹی بنانے کی ہدایت کی۔عدالت نے تمام متعلقہ محکموں کو فوکل پرسن کا تقرر کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ فوکل پرسنز اسموگ کےخاتمےکے لیے سی ٹی او کو قلیل مدتی اقدامات تجویز کریں

?>

اپنا تبصرہ بھیجیں