عاصمہ جہانگیر کانفرنس میں ایسے لیڈر کا خطاب کہ حکومت آگ بگولہ ہو گئی

" >

لاہور(ویب ڈیسک)عاصمہ جہانگیر کانفرنس کے دوسرے روز،اختتامی سیشن سے نواز شریف نے دھواں دھار خطاب کیا جس سے حکومت عہدیدار سیخ پاء ہو گئے

وفاقی وزیراطلاعات فواد چودھری نے اسیمعاملے پر ٹویٹ کرتے ہوئے،سپریم کورٹ بار کو غیر جانبدار رہنے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا ،چیف جسٹس اور سینئر ججوں کے بعد کانفرنس کا اختتام مفرورشخص کی تقریر سے ہوا،یہ ججوں اورعدلیہ کی توہین کےسواکچھ نہیں ہے۔

وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری نے مزید کہا کہ آج عاصمہ جہانگیر کانفرنس میں مجھے مدعو کیا گیا تھا ، مجھے بتایا گیا ہے کہ کانفرنس کا اختتام ایک مفرور ملزم کی تقریر سے ہو گا، ظاہر ہے یہ ملک اور آئین کا مذاق اڑانے کے مترادف ہے ،اس لئے میں نے کانفرنس میں شرکت سے معذرت کر لی ہے۔

علاوہ ازیں اس حوالے سے وزیراعظم عمران خان کے مشیر برائے داخلہ و احتساب مرزا شہزاد اکبر کا کہنا تھا کہ کانفرنس میں چیف جسٹس اور سینیئر ججز کے بعد مفرور شخص کا خطاب رکھنے سے کانفرنس کے منتظمین کی غیرجانبداری پر سنجیدہ شبہات پیدا ہوئے ہیں، معززججز کو اس طرح کے سیاسی اجتماعات سے دور رہنا چاہیے۔

دوسری طرف سپریم کورٹ بار کے صدر احسن بھون کا کہنا ہےکہ عاصمہ جہانگیر کانفرنس میں نواز شریف کی تقریر کے حوالے سے ججز کو آگاہ کرنے کی ضرورت نہیں تھی۔

نجی نیوز چینل سے گفتگو میں احسن بھون کا کہنا تھا کہ ججز کو نہیں پتہ تھا کہ کس کس نے خطاب کرنا ہے اور نہ ان کو بتانے کی ضرورت تھی،ججز کے علم میں بھی نہیں تھا کہ نواز شریف تقریر کریں گے۔

صدر سپریم کورٹ بار کا کہنا تھا کہ کانفرنس کے 25-20 سیشن ہوئے، ہر سیشن کا ایک الگ موضوع تھا،کانفرنس میں افغان ایشو پر فواد چوہدری مہمان خصوصی تھے، وہ نہیں آئے۔

?>

اپنا تبصرہ بھیجیں