ثاقب نثار آڈیو لیک،اپوزیشن نے مشترکہ پلیٹ فارم “پی ڈی ایم” سے سخت اقدامات اٹھانے کا فیصلہ کر لیا

" >

اسلام آباد(ویب ڈیسک) حکومت مخالف اتحاد پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) نے سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی مبینہ آڈیو معاملہ پر سخت موقف اپنانے کا فیصلہ کر لیا ہے۔

پی ڈی ایم کا سربراہ اجلاس اسلام آباد میں مولانا فضل الرحمان کی صدارت میں منعقد ہوا جس میں تمام رکن جماعتوں کے سربراہان اور ان کے نمائندگان شریک ہوئے۔ چند قائدین نے ویڈیو لنک کے ذریعہ شرکت کی۔مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی حالیہ آڈیو لیکس اور رانا شمیم کے بیان حلفی نے عدالتوں کی آزادی اور خودمختاری پر سوالات اٹھادئے ہیں،عدلیہ کو اپنا وقار بحال کرنا ہوگا۔

سربراہ مولانا فضل الرحمان نے دیگر جماعتوں کے قائدین کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پی ڈی ایم سربراہی اجلاس 6 دسمبرکواسلام آباد میں ہوگا،6 دسمبر کو اہم اعلانات کیے جائیں گے، تجاویز 6 دسمبر کو سربراہی اجلاس میں پیش کی جائیں گی، مشاورت سے کچھ تجاویزمرتب کریں گے، پاکستان کے عوام کوجبرسے نجات دلانے کے لیے حتمی اورآخری فیصلے کی طرف بڑھیں گے۔

انہوں نے کہا کہ اوورسیز پاکستانی حکومت کے دھوکے میں نہ آئیں۔ اوورسیز کی پارلیمنٹ میں نمائندگی کیلئے طریقہ کار متعین کریں گے۔ حکومت کا طریقہ کاردھاندلی کی راہ ہموارکرے گا، ہم اوورسیزپاکستانیوں کو پاکستان کا اثاثہ سمجھتے ہیں۔ پوری دنیا ای وی ایم کو مسترد اور ہم اس کے استعمال کی بات کر رہے ہیں۔

پی ڈی ایم سربراہ نے مزید کہا کہ جعلی حکومت نے نوجوانوں سے ایک کروڑنوکریوں کا وعدہ کرکے تاریخ کا سب سے بڑا فراڈ کیا، پچاس لاکھ نوجوانوں کوبے روزگارکردیا گیا، پچاس لاکھ گھردینے کے بجائے گرادیئے گئے۔

بلدیاتی انتخابات کے معاملے پر انہوں نے کہا کہ ابھی کیس عدالت میں چل رہا ہے، اس حکومت کا خاتمہ کرنا ہو گا، اس حوالے سے ہم ایک حکمت عملی کی طرف آگے بڑھ رہے ہیں۔

?>

اپنا تبصرہ بھیجیں