ثاقب نثار کیخلاف مکمل چارج شیٹ پیش،مریم نواز کی دھواں دھار پریس کانفرنس،میڈیا چینلز کو بھی دھو ڈالا

" >

اسلام آباد(ویب ڈیسک) پارٹی رہنماؤں کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے مریم نواز کا کہنا تھا، کہ سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کواپنی آڈیو کی ہر صورت جواب دینا ہوگا
ان کی آڈیو آئی تو ثاقب نثار نے اپنے پہلے بیان میں اس آڈیو کو جعلی قرار دیتے ہوا کہا کہ یہ ان کی آواز نہیں،بعد میں حکومتی ترجمانوں اور کچھ نیوز چینلز نے یہ ثابت کرنا شروع کر دیا کہ یہ آڈیو ثاقب نثار کی بعض تقاریر میں سے اٹھا کر بنائی گئی ہے،جس کے بعد سابق چیف جسٹس نے بھی کہنا شروع کر دیا کہ ہاں یہ مختلف تقاریر کو جوڈ کر خاص مقصد کے لیے آڈیو لیک کی گئی ہے،میں ان چینلز کی شکر گزار ہوں جن کا یہ کام نہیں تھا لیکن انہوں ثاقب نثار کو ان کو یہ پہچان تو کرادی کہ یہ آواز ان کی ہے
مریم نواز کا برہمی کا اظہار کرتے ہوئے مزید کنا تھا کہ نان ایشو اور ایکسٹرا باتوں کو ایشو بنا دیا گیا ،اصل جملے کہ نواز شریف کو سزا دینی ،عمران خان کو لانا ہے،بیٹی کی سزا بنتی ہے یا نہیں باہر کرنا ہے یہ جملے کس تقاریر میں کہے،میں اور عوام منتظر ہیں کہ عوام کے سامنے یہ بھی تقاریر آئے،اور اگر انہوں نے یہ تقاریر میں نہیں کہا تو اس آڈیو کو جواب تو دینا ہوگا
مریم نواز کا کہنا تھا ثاقب نثار بتائیں کس نے انہیں کہا کہ عمران خان کو لانا ہے، بتائیں آپ کو کس نے مجبور کیا کہ نواز شریف اور مجھے سزا دیں، ثاقب نثار بتائیں آپ غیر قانونی اقدامات پر کیوں مجبور ہوئے اور وہ کون تھا جسے آپ بطور چیف جسٹس انکار نہیں کر سکتے تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ نواز شریف اور ن لیگ کے حق میں پانچویں گواہی ہے، عمران خان کوکہا گیا کہ نواز شریف کے خلاف درخواست ہمارے پاس لائیں، پاناما میں 450 افراد کے نام آئے،کسی کوکچھ نہیں کہا گیا جس کا نام نہیں آیا اس کو سزا دی گئی، بیٹے سے تنخواہ نہ لینے پر منتخب وزیراعظم کو آفس سے باہر نکالا گیا۔

?>

اپنا تبصرہ بھیجیں