چور کبھی لیڈر نہیں ہو سکتا،وزر اعظم کا بیان۔نواز شریف کو بھی سخت تنقید کا نشانہ بنا ڈالا

" >

جہلم(ویب ڈیسک) القادر یونیورسٹی میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ رسول اللہ ﷺ دنیا کے عظیم لیڈ ر تھے، ہسٹری کاطالب علم ہونے کے ناطے میں اس نتیجے پر پہنچا کہ رسول اللہ ﷺکی سیرت پر چلنے میں کامیابی ہے، جو لوگ رسول اللہ ﷺ کی راہ پر چلتے ہیں وہی آگے جاتے ہیں،اللہ نے مجھے شہرت ،پیسہ اور سب کچھ دیا،میں سیاست میں تبدیلی لانے کے لیے آیااور اللہ کی مدد سے لیکر آیا ہوں، میری خواہش تھی ملک میں سیرت ﷺ اتھارٹی قائم کریں، ریسرچ سے ہی جامعات بنتی ہیں.

وزیر اعظم نے مخالفین کو بھی ہدف تنقید بناتے ہوئے کہا کہ گزشتہ دنوں ایک کانفرنس ہوئی جس کا مہمان خصوصی وہ آدمی تھا جن کوعدالتوں نے سزادی، کرپشن کو برا نہیں سمجھیں گے تو معاشر ہ بہتر نہیں ہوگا، بدقسمتی سے پاکستان میں چوروں کو برا نہیں سمجھا جاتا۔

وزیراعظم نے خطاب میں مزید کہا کہ سائنس اوراسلام میں لڑائی نہیں تھی لیکن نظریات میں فرق تھا، ملک میں سب سے بڑا مسئلہ مغربی ثقافت کا عام ہونا ہے،مغرب میں 40 سال پہلے خاندانی نظام کدھر تھا اور ہمار ے ممالک پر کیا اثرات مرتب ہوئے دنیا میں اسلام کے خلاف جو بھی عمل ہوتا ہے تو سب سے زیادہ ردعمل پاکستان سے آتا ہے، عمران خان نے مزید کہا کہ پاکستان کو ہر دور میں چیلنجز سے نمٹتے دیکھا، پاکستان کو اوپر جاتے اور نیچے آتے بھی دیکھا، موبائل فون انقلاب ضرور لایا لیکن اخلاقی طور پر نوجوانواں کو کمزور کرنے میں کردار ادا کر رہا ہے.

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ملک میں چوری کرنے والا لیڈر شپ نہیں کرسکتا کیوں کہ وہ معاشرے کونقصان پہنچاتا ہے، خود غرض آدمی کبھی قائد نہیں بن سکتا کیوں کہ وہ اپنی ذات سے اوپر سوچتا ہےوزیر اعظم نے بتایا کہ مدینہ کی ریاست میں لیڈروں کی بارش تھی کیونکہ وہ بلا خوف سرگرم تھے، ترقی کے لیے ریاست مدینہ کے اصولوں پر عمل کرنا ہوگا، مدینہ کی ریاست میں خوف خدا لوگوں کے دلوں میں زندہ تھا۔

?>

اپنا تبصرہ بھیجیں