توہین عدالت کیس!!! رانا شمیم کو اسلام آباد ہائیکورٹ نے سرپرائز دے دیا

" >

اسلام آباد(ویب ڈیسک)ہائی کورٹ نے گلگت بلتستان کے سابق چیف جج رانا شمیم کے خلاف توہین عدالت کیس میں ان کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں ڈالنے کی درخواست مسترد کردی۔

تفصیلات کے مطابق سلام آباد ہائی کورٹ میں سابق چیف جج گلگت بلتستان رانا شمیم کا نام ای سی ایل پر ڈالنے کی درخواست پر سماعت ہوئی، اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے درخواست پر سماعت کی۔وکیل درخواست گزار رائے نواز کھرل نے عدالت میں مؤقف پیش کیا کہ رانا شمیم کا نام ای سی ایل پر ڈالا جائے، سابق چیف جسٹس اگر پہلے یا بعد میں ملک سے فرار ہوگئے تو کیا ہوگا، ان کا نام ای سی ایل پر ڈالا جائے یاان کو کہیں پاسپورٹ سرینڈر کرے۔

اس پر چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ نام ای سی ایل میں ڈالنا حکومت کا کام ہے اس عدالت کا نہیں، رائے نواز کھرل کے وکیل نے استدعا کی کہ نام ای سی ایل میں ڈالا جائے یا رانا شمیم کو کہیں پاسپورٹ سرینڈر کرے۔

دوسری درخواست پر جسٹس اطہر من اللہ نے استفسار کیا کہ آپ توہین عدالت کے کیس میں کیسے فریق بن سکتے ہیں؟وکیل درخواست گزار نے کہا کہ سابق چیف جسٹس ثاقب نثار سے متعلق سب معلومات رکھتا ہوں۔اس پر چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ نے ریمارکس دیے کہ اس کو چھوڑیں، توہین عدالت کیس تو عدالت کا اپنا معاملہ ہوتا ہے۔

دلائل مکمل ہونے کے بعد سابق چیف جج گلگت بلتستان رانا شمیم کا نام ای سی ایل میں ڈالنے اور ایڈووکیٹ رائے نواز کھرل کی رانا شمیم کے خلاف توہین عدالت کیس میں فریق بننے کی درخواستوں پر فیصلہ محفوظ کر لیا گیا۔بعد ازاں چیف جسٹس اطہر من اللہ نے تین صفحات پر مشتمل تحریری حکم نامہ جاری کیا اور وکیل کی کیس میں فریق بننے کی درخواست ناقابل سماعت قرار دے کر خارج کردی

?>

اپنا تبصرہ بھیجیں