You are here
Home > منتخب کالم

چلتے ہو تو میڈیکل کالج چلئے ۔۔۔۔! گل نوخیز اختر کی چھٹکیاں لیتی ہوئی طنز و مزاح پر مشتمل یہ تحریر پڑھ کر آپ بھی لطف اندوز ہوں۔

لاہور(ویب ڈیسک)میڈیکل میں داخلہ لینے کا سب سے بڑا فائدہ ہے کہ بندہ ڈاکٹر بھی بن جاتا ہے اور مریض بھی۔ میں سمجھتا رہا کہ میڈیکل کے سٹوڈنٹس بڑے احتیاط پسند ہوتے ہوں گے‘ ہر چیز ہائی جینک کھاتے ہوں گے۔ لیکن اب تک جتنے بھی سٹوڈنٹس سے ملاقات ہوئی

جو کچھ میں اپنے ملک ، قوم، کرپشن یا لوٹ مار کے حوالے سے کہتا ہوں ، تمہاری نظر میں وہ بغضِ نواز ہے ، آؤ میں تمہیں اس کی اصلیت بتاؤ ۔۔۔۔۔۔ پڑھئے نوجوان کالم نگار کا ایک لاجواب کالم

لاہور(ویب ڈیسک)ادھر افطار ڈنر ختم ہوا، اُدھر چائے کا کہہ کر منصوبہ بندی کے تحت ہم نے شیخو کو گھیرا، اس سے پہلے وہ کچھ سمجھ پاتا ہم میں سے ایک بولا ’’ شیخو تو ایسا کفایت شعار اکثر پرفیوم نہ لگائے کہ کوئی دوسرا نہ سونگھ لے ‘‘ دوسرے

نواز شریف : شاہ جہاں یا اورنگزیب…؟ رؤف کلاسرا کی اس تحریر میں نواز شریف کا ایسا سیاسی تجزیہ کیا گیا ہے جو آج تک کسی نے نہیں کیا

لاہور(ویب ڈیسک)نواز شریف کے مسلسل بیانات اور دھمکیاں سن اور پڑھ کر شیکسپیئر یاد آتا ہے ۔ جب دیوتا کسی کو سزا دینے پر تل جاتے ہیں، تو وہ سب سے پہلے اس بندے کا دماغ خراب کردیتے ہیں ۔ دماغ خراب کرنے کے بعد اسے کسی سزا کی ضرورت

ہم بھیک مانگنا نہیں چاہتیں‘ بھیک ہماری عزتِ نفس پر بوجھ ہے‘ ہم کام کرنا چاہتی ہیں‘ ہم آگے بڑھنا چاہتی ہیں‘ کوئی ہے جو ہمارا ہاتھ تھامے؟ ہمیں کچھ نہیں چاہیے‘ بس دس بیس ہزار روپے قرض پر مل جائیں تو ہم۔۔۔۔ایسی تحریر جو آپ کو جھنجوڑ کر رکھ دے

لاہور(ویب ڈیسک)’’لاہور کی تاریخی بادشاہی مسجد کی سیڑھیوں پر کھڑا‘ میں سولہ برس کی مسافت پر ان لمحوں کو دیکھ رہا ہوں جب اخوت کا آغاز ہوا‘ ایک خستہ حال کچی بستی‘ ٹوٹے پھوٹے درودیوار‘ ٹیڑھی میڑھی گلیاں اور گندگی سے اٹی نالیاں۔اسی بستی میں ایک چھوٹا سا گھر جس

نواز شریف کو اگر جیل بھیجا گیا تو پھر کیا ہوگا؟صف اول کے کالم نگار نے آئندہ ہونے والے واقعات کے بارے میں قبل از وقت انکشاف کر دیا

لاہور(ویب ڈیسک )حضرت اقبال بڑے تھے اس لئے پہاڑ اور گلہری لکھی، میں چھوٹا ہوں اس لئے پہاڑ اور چیونٹی لکھ رہا ہوں۔ میرا پہاڑ بڑا اور میری چیونٹی چھوٹی ہے، میرا پہاڑ بہادر اور میری چیونٹی بزدل ہے، میرا پہاڑ 70سال سے ڈٹا ہوا ہے چیونٹی لاکھ صدائیں دیتی

Top